Islamicinfo.com

Islamic Information Islam religion Information-Islamic Belief and Islamic Current Affairs
Subscribe

Allah Forgives all Minors sins by Offering Salah

October 09, 2018 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Uncategorized

Allah Forgives all Minors sins by Offering Salah

‘Amr bin Sa’id bin al-As reported:

I was with Uthman, and he called for ablution water and said: I heard Allah’s Messenger (ﷺ) say: When the time for a prescribed prayer comes, if any Muslim performs ablution well and offers his prayer with humility and bowing, it will be an expiation for his past sins, so long as he has not committed a major sin; and this applies for all times. (Bokhari, Muslim)

This hadith reveals that Allah-All-Mighty forgives the past minor sins of a faithful believer due to offering the obligatory salah. As regards the major sins like ascribing partner to Allah, to kill someone unlawfully etc. These are not forgiven but by offering “tauba” i.e. repentance. So, it is necessary to every faithful believer that he/she should offer prayers for five times daily regularly so that his sins may be forgiven and he may be entered in Paradise, Ameen.

سب ٹھاٹھ پڑا رہ جائے گا جب لاد چلے گا بنجارا

September 22, 2018 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Uncategorized

بنجارالغت میں ایسے شخص کو کہتے ہیں جو غلّے کا تاجر ہو یا ایسا شخص جو کوئی سامان اپنے مونڈہے پر لاد کر بیچتاہو یا مزدوری پر کوئی سامان اٹھا کر ادھر ادھر منتقل کرتا ہو بہرحال اس کہاوت میں بنجاراسے مراد موت کا فرشتہ ہے جو انسان کی روح کو نکال کر لے جاتا ہے، مقصد یہ ہے کہ جب موت آجائے گی توٹھاٹھ باٹھ یہیں رہ جائیں گے اور انسان چلتابنے گا۔
یہ ایک ایسی حقیقت ہے کہ جس کا دنیا میں کوئی شخص انکار نہیں کر سکتا چاہے وہ کسی بھی مذہب یا مکتبہ فکر سے تعلق رکھتا ہے یا اسکا کوئی بھی مذہب نہیں اور وہ دہریہ ہے اور خدا کے وجود کا منکر ہے، سب یہی کہیں گے کہ مرنا بر حق ہے سو سال بھی جینا ہے تو آخر مرنا ہے۔
حقیقت یہ ہے کہ کسی کا بھی کچھ پتا نہیں کہ کب اسکا ٹائم آ جائے۔ جب کسی شخص کی اچانک مو ت واقع ہوتی ہے تو لوگ حیران ہوتے ہیں کہ یہ شخص فو ت بھی ہو گیا ابھی تو یہیں بیٹھاہوا تھا، گھر والوں کے ساتھ گپ شپ لگا رہا تھا، کاروباری معاملات پر بات چیت کر رہا تھا، اسے کیا ہو ا منٹوں میں روح پرواز کر گئی؟یہ اس لئے کہ حکم الحکمین کا حکم آ گیا جسکا فرمان ہے کہ ’’ ہر جان نے موت کا ذائقہ چکھنا ہے‘‘( القرآن)۔
سوال یہ ہے کہ ’’بنجارے‘ ‘نے یہاں سے لاد کر کے جس مقام پر جاکہ ڈال دینا ہے وہ جگہ کس طرح کی ہے؟ تو وہ جگہ دو طرح کی ہے یعنی یا تو وہ دوزخ کے گڑھوں میں سے ایک گڑھا ہے اور یا جنّت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے۔بقول شاعر………
دلا غافل نہ ہو یکدم یہ دنیا چھوڑ جانا ہے
باغیچے چھوڑ کر خالی زمین اندر سمانا ہے
تیرا نازک بدن بھائی جو لیٹے سیج پھولوں پر
ہووے گا اک دن یہ برباد یہ کرموں(کیڑے مکوڑوں)نے کھانا ہے
یعنی اگر عقائد و اعمال اچھے ہیں توپھر وہ جگہ جنّت کے باغیچوں، اسکی نعمتوں او ر ٹھنڈی ٹھنڈی ہواؤں کا مرکز ہے اور اگر معاملہ اسکے برعکس ہے تو پھروہ طرح طرح کے عذاب کا گھر ہے۔بہرحال اگر صحیح نیّت کے ساتھ جدّوجہد کی جائے تو اللہ تعالیٰ کی رحمت سے قوی امّید ہے کہ وہ محض اپنے فضل و کرم سے دوزخ کی آگ سے بچا کر قبر کو جنّت کا باغ بنا دیں گے اور روز آ

Sadqa wa Khirat

August 13, 2018 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Uncategorized

Friends will be Foes On the Day of Resurrection

August 05, 2018 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Uncategorized

 

Friends will be Foes On the Day of Resurrection

 

Almighty Allah Says in the holy Qur’an,”Friends on that Day will be foe one to another, save those who kept their duty (to Allah). O My slaves! For you there is no fear this Day, nor is it ye who grieve” (Azz-ukhruf:68).

These verses reveal that all the friends of the world will be enemy to one another at the Day of Judgment except those who are righteous ones. It means that the friendship of transgressors will be the harmful to the faithful believers at the Day. A faithful believer will take his heel from his guilty party friend lest he should be seized due to his sins.

This is the reality that when anyone makes friendship with others, he adopts something of his friend’s habits, culture and civilization etc. That makes deep effects on his life. So the man must be careful about his friendship.

The holy Prophet PBUH said that there would be seven types of persons who will be under the shadow of the highest heaven when there would be no shadow except the shadow of it. Amongst them there would be the two who met and became separate only for the cause of Allah Almighty.

This hadith reveals that the relationship or the friendship should be only the basis of righteousness and Islamic teachings.