Islamicinfo.com

Islamic Information Islam religion Information-Islamic Belief and Islamic Current Affairs
Subscribe

Alcohol, The Devil’s Deadly Disease

July 22, 2014 By: Mohammad Rafique Etsami Category: Uncategorized

In the year 988 CE, Prince Vladimir, sovereign leader of Kievan Russia, opted for Orthodox Christianity as his state religion.  Legend says his ambassadors were much more impressed with the gold and grandeur of Byzantine’s cathedrals, especially Constantinople’s Church of Santa Sophia (now Istanbul’s Mosque of Haya Sofiya) than they were with the simple and austere décor of the Islamic houses of worship (i.e. the mosques) in nearby Volga Bulgaria.  But another, more telling reason for the Russian Prince’s favoring Christianity over Islam was, so the chroniclers tell us, the Russians’ love of alcohol.  The Muslims’ absolute abstention from liquor was a sacrifice too far for Vladimir’s countrymen to make.  Alas, it would appear that their insatiable thirst for a “good” drink, particularly vodka, has plagued the Russian nation ever since.

According to a report published in the year 2000[1], a staggering two thirds of Russian men die drunk and more than half of that number die in extreme stages of alcoholic intoxication.  At 57.4 years, Russian men have the lowest life expectancy in Europe.  Although heart disease, accidents and suicides account for nearly 75% of male deaths, they are seldom sober when they die.  Wrote the daily Kommersant newspaper in commentary of a three-year study of men aged between 20 and 55 in Moscow and Udmurita:

“Everyone is drunk: murderers and their victims, drowning victims, suicides, drivers and pedestrians killed in traffic accidents, victims of heart attacks and ulcers.”

Though they make for bleak reading, these statistics should not and do not suggest that alcoholism be taken as an ethnic marker for the Russian, nor indeed for any other tribe from the children of Adam.  As Mr. Cherniyenko, vice chairman of the National Organization of Russian Muslims, remarks:

“One can say that drinking vodka or wine is a significant aspect of Russian culture, yet I can be a good Russian while not drinking alcohol…  Most of the social problems in Russia are caused by alcohol consumption.  If we can introduce some Islamic social values to Russia, society and the country will become stronger.”

Looking much further west across the Atlantic (or east across the Bearing Straits) towards Russia’s great rival during the Cold War, the United States, we find that the American nation does not fair much better when it comes to drink-related death and injury.  According to a 1988 study by the American Medical Association, some 100,000 deaths and $85.8 billion are linked to the abuse of alcohol, with 25 to 40 percent of hospital beds being occupied by people being treated for alcohol-induced complications.  Alcohol is also the US’s leading cause of traffic accidents, with 17,126 people killed in alcohol-related crashes in 1996 alone, according to government statistics.  Alcohol is also the principle cause of family breakdown in the US.  And in another report published in 2006 by the U.S.  Center for Disease Control and Prevention, test results from suicide victims in 13 states showed that 33.3 per cent – one in three! – had alcohol in their blood.  But again, statistics aside, there is nothing intrinsic in the American physiology that consigns it to an alcoholic abyss.  Take the bottle away from the American, as happened in one particular Islamic setting, and a rather different result is recorded.

“Our sick call rate went down, our accident and injury rate went down, our incidents of indiscipline went down, and health of the force went up.  So there were some very therapeutic outcomes from the fact that no alcohol was available whatsoever in the kingdom (of Saudi Arabia).” (Gen. Norman Schwarzkopf, commander of allied forces in the Persian Gulf War, explaining to the US Congress how a scarcity of alcohol made for a better American soldier.  June 13, 1991)

Even the unborn are not safe from the dangers of alcohol.  Fetal alcohol syndrome is a rather nasty disease caused by exposure to alcohol in the womb.  The disease strikes one to two babies in every 1,000 births worldwide and results in chronic physical and neurological damage.  According to a 10-year German study[2], symptoms include long-lasting brain damage and temporary physical deformities including a smallness of the head and stunted growth.  To avoid fetal alcohol syndrome, not only are mothers recommended to completely avoid alcoholic drink during pregnancy, but doctors also recommend that men practice abstinence for several months prior to conception.

“…Will you then not abstain?” (Quran 5:91)

Suicide, homicide, domestic violence, grievous bodily harm, vandalism, self abuse and unborn-child abuse! – all evil consequences of alcohol consumption.  And yet, the disease of alcohol is easily and roundly avoided by the adherents to the religion of Islam, or by those who find themselves in areas where Islamic writ is observed.  For if alcohol is indeed a disease, no less the Devil’s deadly disease, then it is one from which the pious Muslim is immune, even though it be the only disease which

·        is sold in bottles;

·        is advertised in newspapers, magazines, radios and television;

·        is contracted by the will of man;

·        has licensed outlets to spread it;

·        produces revenue for the government;

·        brings violent deaths on the highways;

·        has no germs or viral cause;

·        propels one’s health to self-destruction;

·        destroys family life and increases crime.[3]

“O you who believe!  Intoxicants (all kinds of alcoholic drinks), gambling, idolatory and the divining of arrows are an abomination of Satan’s handiwork.  So avoid (strictly all) that (abomination) in order that you may be successful.  Satan seeks only to cast amongst you enmity and hatred by means of strong drink and gambling, and hinder you from the remembrance of God and from his worship.  Will you then not abstain?” (Quran 5:90-91)
(FromThe Religion of Islam with thanks)

July 02, 2014 By: Mohammad Rafique Etsami Category: Uncategorized

ب

شیطان ابلیس کا خطاب

May 31, 2014 By: Mohammad Rafique Etsami Category: Current Islamic Articles

محمد رفیق اعتصامی
ارشاد باری تعالیٰ ہے ’’ اور ہم نے تم کو پیدا کیاپھر تمھاری صورتیں بنائیں پھر حکم کیا فرشتوں کو کہ سجدہ کرو آدم کو پس سجدہ کیا سب نے مگر اابلیس کہ نہ تھا سجدہ کرنے والوں میں، اللہ نے فرمایا کہ تجھ کو کیا امر مانع تھا کہ تو نے سجدہ نہ کیا جب میں نے حکم دیا اس نے کہا ک میں اس سے بہتر ہوں کہ مجھ کو بنایا تو نے آگ سے اور اس کو بنایا مٹی سے، فرمایا اللہ تعالیٰ نے تو اتر یہاں سے تو اس لائق نہیں کہ تکبّر کرے یہاں پس باہر نکل تو ذلیل ہے۔ شیطان نے کہا کہ مجھے مہلت دے اس دن تک کہ لوگ قبروں سے اٹھائے جائیں، فرمایا تجھ کو مہلت دی گئی۔ ا س نے کہا کہ جیسا تونے مجھے گمراہ کیا ہے میں بھی انکی تاک میں بیٹھوں گا تیری سیدہی راہ پر پھر ان پر آؤں گا انکے آگے سے اور پیچھے سے اور دائیں سے اور بائیں سے اور نہ پائے گا تو اکژ لوگوں کو شکر گزار، اللہ تعالیٰ نے فرمایا نکل یہاں سے برے حال سے مردود ہوکر جو کوئی ان میں سے تیری راہ پر چلے گا تو میں ضرور بھر دوں گا دوزخ کو تم سب سے‘‘(الااعراف:۱۸)
اس بنا پر اب شیطان و انسان کی آپس میں دشمنی ہے اس کی ہرلمحہ یہ کو شش ہوتی ہے کہ انسان کو سیدہی راہ سے بھٹکادے۔ جو شخص دین اسلام کو قبول کرنے کی کوشش کرتاہے اوراسکی تعلیمات پر عمل کرنے کی کوشش کرتا ہے تو شیطان اسکی راہ میں رکاوٹ بن جاتا ہے اور اسے اس راہ سے باز رکھنے کی پوری پوری کوشش کرتا ہے۔ حدیث شریف میں ہے کہ شیطان انسان کے اندر خون کی طرح گردش کرتا ہے اور اسکے دل میں طرح طرح سے وسوسہ اندازی کرتاہے اور اسکے ان کاموں کو جو خلاف شریعت ہوتے ہیں انھیں وہ اسکی نظروں میں صحیح کرکے دکھا دیتا ہے اور اسے اسکا احساس بھی نہیں ہونے دیتا کہ انکا انجام غلط ہے۔
مثلاً جو لوگ بت پرستی کرتے ہیں وہ اسے غلط نہیں سمجھتے اور خود اپنے ہاتھوں سے تراشے ہوئے بتوں کو اپنا خدا اور حاجت روا سمجھتے ہیں اور انکی عبادت کرتے ہیں۔ اسی طرح مجوسی لوگ آگ کی پوجا کرتے ہیں اور کائنات میں دو خداؤں کی حکمرانی تسلیم کرتے ہیں یعنی یزدان اور اہرمن اسی طرح دیگر مذاہب کے پیرو کاروں کا حال ہے اگر وہ اپنے عقائد و اعمال کو غلط سمجھتے تو انھیں چھوڑ دیتے مگر شیطان نے انکے دلوں میں یہ بات بٹھادی ہے کہ تم اور تمہارے آباء و اجداد کا مذہبب بالکل صحیح ہے۔
اور جو لوگ مسلمان ہیں ان میں جو لوگ خلاف شرع کام کرتے ہیں تو شیطان ان کاموں کو انکی نظروں میں صحیح کرکے دکھادیتا ہے اور کہتا ہے کہ یہ تو زمانے کا دستورہے اور اس میں کوئی برائی نہیں۔ مثال کے طور پر جو لوگ رشوت لیتے ہیں وہ اسے رشوت نہیں سمجھتے بلکہ اسے ’’چائے پانی اور اللہ کا فضل‘‘ سمجھتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہم رشوت مانگتے تھوڑا ہی ہیں بلکہ لوگ خود ہی اسے ہماری جیب میں ڈال دیتے ہیں تو اس میں ہمارا کیا قصور ہے؟
اور جو سرکاری ملازم رشوت لینے کے عادی ہیں اگر ان سے پوچھا جائے کہ آپکی تنخواہ کتنی ہے ما شاء اللہ؟ تو وہ نہایت متانت سے یہ جواب دیتے ہیں کہ بھائی !تنخواہ تو تھوڑی ہے مگر ’’اوپر سے‘‘ اللہ میاں کا بڑا فضل ہے۔ اسی طرح اجناس میں ملاوٹ کرنے والے بھی اس کام کو صحیح سمجھتے ہیں اور بلا خوف و خطر کرتے ہیں انکے نزدیک چائے میں چنے کے چھلکے، سرخ مرچوں میں رنگا ہوا برادہ،مونگ کی دال میں موٹھ وغیرہ ملانے سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ یہ انکی روزی کا مسئلہ ہے اور اسکے بغیر انکا کام نہیں چلتا۔
اسی طرح فحاشی، عریانی اور ناچ رنگ کو تہذیب و ثقافت کا نام دیا جاتا ہے اور کہا جاتا ہے کہ یہ روح کی غذا اور زندہ قوموں کی پہچان ہے اور موسیقی سننے سے روح کے بند دریچے کھل جاتے ہیں۔ یہ سب باتیں اس لئے عرض کی گئی ہیں کہ شیطان نے انسان کے دل میں یہ بات بٹھا دی ہے کہ تم جو کچھ بھی کرتے ہو وہ با لکل جائز اور صحیح ہے۔ اسی طرح انسان کی زندگی بیت جاتی ہے اور اسے اپنے غلط کاموں کا احساس نہیں ہوتا۔
مگر حیرت کی بات یہ ہے کہ جس شیطان ابلیس کی اطاعت کرتے وہ ساری زندگی گذار دیتا ہے وہ روز قیامت انسان سے اپنی بر۱ئت کا اظہار کر دے گا کہ تم نے دنیا میں جو غلط کام کئے ہیں وہ اپنی مرضی و اختیار سے کئے ہیں اور اس میں میرا کوئی قصور نہیں۔قرآن پاک میں یہ بات بیان کی گئی ہے’’اور شیطان کہے گا جب فیصلہ ہو جائے گا سب کاموں کا کہ اللہ نے تم کو سچا وعدہ دیا تھا اور میں نے بھی تم سے ایک وعدہ کیا تھا پھر جھوٹا کیا اسکو اور میری تم پر کوئی حکومت نہ تھی مگر یہ کہ میں نے بلایا تم کو پھر تم نے مان لیا میری بات کو پس الزام نہ دو مجھ کو اور الزام دو اپنے آپ کو نہ میں تمھاری فریاد کو پہنچوں اور نہ تم میری فریاد کو پہنچو میں منکر ہوں اس سے جو تم نے مجھ کو شریک بنایا تھا اس سے پہلے اور جو ظالم ہیں انکے لئے دردناک عذاب ہے‘‘(ابراہیم:۲۲) ۔
ہم دنیا میں جو غلط کام کرتے ہیں تو اسکا الزام شیطان کو دیتے ہیں کہ اس نے ہمیں بہکایا تو ہم نے یہ غلط کام کئے یا ہم شیطان کے بہکاوے میںآگئے تھے تو ہم سے ایسا ہو گیا اور اپنی کسی غلطی کو تسلیم نہیں کرتے گویا ہم فرشتے ہیں اور کوئی غلطی نہیں کرتے اور ہر قسم کے غلط کام ہم سے شیطان ہی کرواتا ہے۔
مثلاً کوئی شخص اگر نماز نہیں پڑھتا، روزہ نہیں رکھتا، غلط بیانی یا کسی غلط کاری میں مبتلا ہے تو سب کا ذمہ دار وہ شیطان ہی کو ٹھراتا ہے مگر یہ بات تو تب صحیح ہو کہ اللہ تبارک و تعالیٰ روز قیامت تمام انسانوں کا حساب لینے کی بجائے صرف شیطان ہی کو پکڑلیں اور کہیں کہ تو نے میرے بندوں کو بہکایا ااور انھیں برائی میں مبتلا کیا وہ تو سب میرے فرمانبردار بندے تھے مگر تو نے انھیں گمراہ کر کے چھوڑا لہٰذا اب تو ہی ان سب کی طرف سے سزا بھگت! اور پھر اسے دوزخ میں ڈال دیا جائے! مگر ایسا نہیں ہو گا کیونکہ اللہ تبارک و تعالی ٰنے انسان کو ایک ایسی روشنی عطا کی ہے کہ جس سے وہ اپنے برے بھلے کی پہچان کر سکتا ہے چنانچہ فرمایا ’’ ہم نے انسان کو دو ابھرے ہوئے ٹیلوں (نیکی اور بدی) کی راہ دکھائی‘‘(القرآن) اور پھرانسان کو اسکا اختیار بھی دیا گیا ہے کہ وہ دونوں راستوں میں سے اپنے لئے ایک راستہ کا انتخاب کر لے۔
لہٰذا روز قیامت حساب و کتاب انسان کے اچھے اور برے اعمال کی بنیاد پر ہوگا نہ کہ شیطان کے بہکاوے پر!! لہٰذا آج وقت ہے کہ ہم اپنے اعمال کا جائزہ لیں کہ ہم کس طرف جارہے ہیں آیا ہمارے اعمال شریعت کے مطابق ہیں یا شیطان کی اطاعت گذاری میں؟

Kamyab Zindagi ka Raz

May 27, 2014 By: Mohammad Rafique Etsami Category: Current Islamic Articles