Islamicinfo.com

Islamic Information Islam religion Information-Islamic Belief and Islamic Current Affairs
Subscribe

ایک صاحب کرامت لڑکے کا واقعہ

April 28, 2013 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Dimensions of belief

ایک صاحب کرامت لڑکے کا واقعہ
محمد رفیق اعتصامی
ارشاد باری تعالی ٰ ہے’’قسم ہے آسمان کی جو برجوں والاہے اور قسم ہے اس دن کی جسکا وعدہ دیا جاتا ہے (یعنی قیامت کا دن)اور قسم ہے اس دن کی جو تمام شہروں میں حاضر ہوتا ہے (یعنی جمعہ کا دن)اور قسم ہے اس دن کی جس میں لوگ حاضر ہوتے ہیں(یعنی عرفہ کا دن)، مارے گئے خندقوں والے،وہ ایک آگ تھی ایندھن والی……الخ (سورہ البروج :۷) ان آیات کا شان نزول یہ ہے کہ کسی زمانہ میں ایک کافر بادشاہ تھا اس کے پاس ایک جادوگر رہتا تھا جب اس جادوگر کی موت کا وقت قریب آیا تو اس نے بادشاہ سے کہا کہ مجھے ایک ہونہار لڑکا چاہئے تاکہ میں اپنا علم اسے منتقل کر دوں اور میرے مرنے کے بعد وہ لڑکا میری جگہ سنبھال سکے ۔ بادشاہ نے لڑکے کا انتظام کر دیا اور وہ لڑکا اس جادوگر کے پاس آنے جانے لگا۔ جس راستہ سے وہ لڑکاآتا تھا وہاں ایک راہب بھی رہتا تھا جو اس وقت کے مطابق دین حق پر تھا وہ لڑکا کچھ دیر کیلئے اس کے پاس بھی بیٹھنے لگا۔رفتہ رفتہ اس راہب کی صحبت کے اثر سے وہ لڑکا ولایت کے مقام پر پہنچ گیا اور ولی کامل بن گیا۔
ایک دن کسی جگہ پر ایک شیر نے راستہ روک رکھا تھا اس لڑکے نے ایک پتھر اٹھا یا اور یہ کہ کر اس شیر کو مارا کہ باری تعالیٰ! اگر اس راہب کا دین سچا ہے تو یہ شیر اس پتھر سے ہلاک ہو جائے۔ اس پتھر کا شیر کو لگنا تھا کہ وہ ہلاک ہو گیا، ایک دن ایک برص کا مریض اس لڑکے پاس آیا اور کہاکہ میرے لئے دعا کریں اللہ تعالیٰ مجھے صحت عطا کرے۔ لڑکے نے دعا کی تووہ صحت یاب ہو گیا۔ایک دفعہ ایک اندھا شخص اس کے پاس آیا اور دعا کی درخواست کی۔آہستہ آہستہ یہ خبر بادشاہ تک پہنچی کہ وہ لڑکا جسے آپ نے جادو سیکھنے کیلئے جادوگر کے پاس بھیجا تھا وہ تو کسی اور راستہ پر چل نکلا ہے۔
بادشاہ نے غصے میں آکر اس لڑکے کو مع اس راہب اور اندھے کے طلب کیا اور کچھ بحث و تمحیص کے بعد دونوں کو شھید کردیا اور لڑکے کے بارے میں یہ حکم دیا کہ اسکو کسی اونچے پہاڑ سے گرا کر مار دیا جائے مگر خدا کی قدرت کہ جو لوگ اس لڑے کو لے کر گئے تھے وہ تو ہلاک ہو گئے مگر وہ لڑکا بچ گیا اب بادشاہ نے پھر حکم دیاکہ لڑکے کو دریا میں ڈبو کر ہلاک کر دیا جائے مگر جو لوگ اس لڑکے کو لے کر گئے تھے وہ خود تو ڈوب گئے اور لڑکا پھر بچ گیا۔
اب لڑکے نے بادشاہ سے کہا ایسے میں نہیں مروں گا بلکہ میں خود آپ کو اپنے مرنے کی ترکیب بتا تا ہوں۔آپ سب لوگوں کو ایک کھلے میدان میں اکھٹا کر لیں اور پھر سب کے سامنے مجھے یہ کہ کر تیر ماریں بسم اللہ رب الغلام یعنی اللہ تبارک و تعالیٰ کے نام کے ساتھ جو اس لڑکے کا رب ہے۔بادشاہ نے ایسا ہی کیا۔
جب اس لڑکے کو تیر مارا گیااور اسکا خون بہنے لگا تو سب لوگون کی زبان سے یکلخت یہ نکلا ’’ آمنا برب الغلام‘‘ کہ ہم اس لڑکے کے رب پر ایمان لائے۔بادشاہ کے درباریوں نے کہا کہ جس بات کا ڈر تھا وہی ہوا۔
بادشاہ نے غصہ میں آکر بڑی بڑی خندقین کھدوایءں اور ان میں آگ جلائی گئی جو نہائت خوفناک تھی اب بادشاہ نے اعلان کیا کہ جو شخص اس لڑکے کے دین سے نہیں پھرے گا اسکو اس آگ میں ڈالا جائے گا۔ لوگوں نے واضح طور پر کہا کہ ہم اپنے دین سے نہیں پھریں گے چا ہے ہمیں جلاہی کیوں نہ دیا جائے۔تو بادشاہ کے کارندوں نے لوگوں کو پکڑ کر آگ میں ڈالناشروع کر دیا۔ایک ماں کو لایا گیا اسکا بچہ دودھ پی رہا تھا ماں کچھ گھبرائی مگر بچہ کو خدا تعالیٰ نے قوت گویائی عطافرمائی اس نے ماں سے کہا اماہ اصبری فانک علی الحق کہ اماں جان صبر کریں آپ حق پر ہیں۔
بادشاہ اور اسکے حواری سامنے بیٹھے مسلمانوں کے جلنے کا تماشہ دیکھ رہے تھے اور لطف اندوز ہو رہے تھے اور قرآن کے مطابق ان سے یہ سلوک اس لئے کیا جارہا تھا کہ وہ ایسے اللہ پر ایمان رکھتے تھے جو کہ زبردست اور غالب ہے اور تعریف کیا گیا ہے اور اسی کیلئے ہے بادشاہی آسمانوں اور زمین کی۔ تفسیر میں لکھا ہے کہ جب اللہ کا غضب آیا تو وہی آگ پھیل پڑی اور بادشاہ اور اسکے حواریوں کے گھرجلا دیئے۔
ان آیات کریمہ سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ جو لوگ مسلمانوں کو ان کے دین سے برگشتہ کرتے ہیں یا انہیں اسلام کو چھوڑنے اور کسی اورمذہب کی طرف آنے کا کہتے ہیں انہیں روز قیامت دوزخ کی آگ میں جلایا جائے گا اور انکا برا ٹھکانا ہوگا۔ اللہ تبارک و تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں دین اسلام پر قائم رہنے اور اسکی تعلیمات پر عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے، خاتمہ ایمان پر فرمائے آمین!

Back to Conversion Tool

The World of Dream land and Reality

April 23, 2013 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Uncategorized

By Mohammad Rafique Etesame

When the people go to sleep, they enter in the “dream land”, and see various types of dreams. Sometimes they fly in the air, and sometimes they travel in the forests, valleys, and color full gardens etc.  Sometimes they eat delicious foods and drink. But when they wake up, all of these go in the air and they find themselves lying down on the bed and feel no impression of their dreams.

Same is the example of our worldly life; as we travel, eat drink and do good or bad actions. But after passing forty, fifty or even the hundred years of our life, we find no mark of our gone days except the weakness of the old age. It is reality that every tasty food or drunken able drinks loses its taste when they reach in the stomach. Only the tongue relishes its taste. Even the sexual desire ends after a few moments and when the couple separates each other, they feel normal and they find no sign of it.

In fact, all the properties and effects of this world is a false screen. The Holy Qur’an reveals,” Know that the life of this world is only play and idle talk, and pageantry, and boosting among you, and rivalry in respect of wealth and children, as the likeness of vegetation after rain, whereof the growth is pleasing to the husbandman, but afterward it drieth up and thou seast it turning yellow, then it becometh straw. And in the Hereafter there is grievous punishment, and (also) forgiveness from Allah and His good pleasure, whereas the life of the world is but matter of illusion.” (Al-Hadeed:20)

But when the time of the dream land of this world ends, then a new era of a real life begins. And this is a life after death. Soon after its end, when one laid to rest in the grave, then three angel “Munkar Nakeer” come in the grave and put on three questions as:-

(1)    Who is your real Lord?

(2)    What is your religion?

(3)    What your Holy Prophet (PBUH)?

And if the dead replies,” Allah Almighty is my Lord and Islam is my religion and Mohammad is my Holy Prophet (PBUH). Then the Angels say to him “you are successful one! So go to the sound sleep and there is no disturbance and grief over you at all”.

And on the other hand, if he is not the Muslim and is a follower of another religion accept Islam, he will answer to every question,” I don’t know who is my Lord and what is my religion and who is my Prophet (PBUH)?”. Then the Angels beat him by a severe punishment. His grave becomes so narrow that his ribs rush into one another and various types of torments are subdued over him.

It is mentioned that when a faithful believer who offered prayers for five times daily regularly, when dies and put in the grave and Munkar Nakeer put on him three questions, he sees there the time of Asar  (afternoon prayer). So he says to them “look it is the time of my prayer, and I have to offer it. First I will offer my prayer then I will answer your questions”. The Angels reply to him, ”O the slave of God! It is not your worldly life but it is your life after death and you are now in the grave. Here you are not bound to offer any prayer or act upon other Shariah orders. It is the time to get the reward of your actions done in your worldly life”. But he insists to offer prayer. The Angels go to Allah Almighty and mention the whole story. Allah Almighty Says ,”he is

 My slave that no worldly business prevented him from offering prayers or acting upon other My commands. So let him offer prayer, I have forgiven all his sins”.

It is said that when a faithful believer who love the Holy Qur’an and recite it daily, when dies and put in the grave, then the it appears in the shape of a beautiful man having bright face and says,”my friend don’t worry! despite all of your relatives and friends separated by you but I am with you. I shall make recommendation for your forgiveness and, that will be accepted surely”. Then the grave becomes full of light.

The Holy Prophet (PBUH) said that grave was whether a hole from the holes of Hell or the small garden from the gardens of Paradise. (Almishkat)

In fact, grave is as an “Examination hall” where the “answer sheet” comprising the three questions (as mentioned before) will be given to everyone. Whether he is Muslim, none Muslim, good or bad. And it is the reality that no one can answer theses question correctly but one who is the true Muslim.

As it is mentioned before that our past worldly life like as the dreams and all our actions go in the air but those done under the commands of Allah Almighty, are everlasting and immortal.

These are the best provision for us taken from this “world of dream land” to the “world of reality” (Life in the Hereafter). These are “Baqiyatus-Salihat” or ever remaining good actions. The Holy Qur’an reveals, “Then, as for him who is given his record in his right hand, he will say: Take, read my book!

Surely I know that I should have to meet my reckoning.

Then he will be in blissful state

In a high Garden Whereof the clusters are in easy reach.

(And it will be said unto those therein) Eat and drink at ease for that which ye sent on before you in past days.” (Al-Mujadalah:24)

In short, this is the time to do good actions according to the teachings of Islam so that we may succeed in this life and also in the life after death.

Khaboon ki Dunya

April 23, 2013 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Current Islamic Articles

Respected viewers! YouTube has been blocked in Pakistan. To watch this video first click on this link
YouTube Unblocker | Access YouTube Anywhere | Free YouTube Proxy 

Then copy and paste this link to its browser  http://www.youtube.com/watch?v=IELNnFODAiw&list=UU6zrZHc-waAOU73hy2gwuFQ&index=1  Thanks.

http://www.youtube.com/user/MrIslamicinfo?feature=watch

 

Rahmat

April 08, 2013 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Uncategorized