Islamicinfo.com

Islamic Information Islam religion Information-Islamic Belief and Islamic Current Affairs
Subscribe

سب ٹھاٹھ پڑا رہ جائے گا جب لاد چلے گا بنجارا

September 22, 2018 By: Mohammad Rafique Etsame Category: Uncategorized

بنجارالغت میں ایسے شخص کو کہتے ہیں جو غلّے کا تاجر ہو یا ایسا شخص جو کوئی سامان اپنے مونڈہے پر لاد کر بیچتاہو یا مزدوری پر کوئی سامان اٹھا کر ادھر ادھر منتقل کرتا ہو بہرحال اس کہاوت میں بنجاراسے مراد موت کا فرشتہ ہے جو انسان کی روح کو نکال کر لے جاتا ہے، مقصد یہ ہے کہ جب موت آجائے گی توٹھاٹھ باٹھ یہیں رہ جائیں گے اور انسان چلتابنے گا۔
یہ ایک ایسی حقیقت ہے کہ جس کا دنیا میں کوئی شخص انکار نہیں کر سکتا چاہے وہ کسی بھی مذہب یا مکتبہ فکر سے تعلق رکھتا ہے یا اسکا کوئی بھی مذہب نہیں اور وہ دہریہ ہے اور خدا کے وجود کا منکر ہے، سب یہی کہیں گے کہ مرنا بر حق ہے سو سال بھی جینا ہے تو آخر مرنا ہے۔
حقیقت یہ ہے کہ کسی کا بھی کچھ پتا نہیں کہ کب اسکا ٹائم آ جائے۔ جب کسی شخص کی اچانک مو ت واقع ہوتی ہے تو لوگ حیران ہوتے ہیں کہ یہ شخص فو ت بھی ہو گیا ابھی تو یہیں بیٹھاہوا تھا، گھر والوں کے ساتھ گپ شپ لگا رہا تھا، کاروباری معاملات پر بات چیت کر رہا تھا، اسے کیا ہو ا منٹوں میں روح پرواز کر گئی؟یہ اس لئے کہ حکم الحکمین کا حکم آ گیا جسکا فرمان ہے کہ ’’ ہر جان نے موت کا ذائقہ چکھنا ہے‘‘( القرآن)۔
سوال یہ ہے کہ ’’بنجارے‘ ‘نے یہاں سے لاد کر کے جس مقام پر جاکہ ڈال دینا ہے وہ جگہ کس طرح کی ہے؟ تو وہ جگہ دو طرح کی ہے یعنی یا تو وہ دوزخ کے گڑھوں میں سے ایک گڑھا ہے اور یا جنّت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے۔بقول شاعر………
دلا غافل نہ ہو یکدم یہ دنیا چھوڑ جانا ہے
باغیچے چھوڑ کر خالی زمین اندر سمانا ہے
تیرا نازک بدن بھائی جو لیٹے سیج پھولوں پر
ہووے گا اک دن یہ برباد یہ کرموں(کیڑے مکوڑوں)نے کھانا ہے
یعنی اگر عقائد و اعمال اچھے ہیں توپھر وہ جگہ جنّت کے باغیچوں، اسکی نعمتوں او ر ٹھنڈی ٹھنڈی ہواؤں کا مرکز ہے اور اگر معاملہ اسکے برعکس ہے تو پھروہ طرح طرح کے عذاب کا گھر ہے۔بہرحال اگر صحیح نیّت کے ساتھ جدّوجہد کی جائے تو اللہ تعالیٰ کی رحمت سے قوی امّید ہے کہ وہ محض اپنے فضل و کرم سے دوزخ کی آگ سے بچا کر قبر کو جنّت کا باغ بنا دیں گے اور روز آ